اسلام آباد ہائیکورٹ نے چوہدری پرویز الٰہی کی دوبارہ گرفتاری پر توہین عدالت کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا

اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس طار ق محمود جہانگیری نے چوہدری پرویز الٰہی کی دوبارہ گرفتاری پر توہین عدالت کی درخواست خارج کر دی ۔
اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس طارق محمود جہانگیری نے چوہدری پرویز الٰہی کی جانب سے آئی جی اسلام آباد اور ڈی سی اسلام آباد کے خلاف توہین عدالت کی درخواست پر سماعت کی ،تحریک انصاف کے صدر کی جانب سے توہین عدالت درخواست میں ایس ایس پی آپریشنز ، ایس ایچ او تھانا شالیمار اور دیگر کو فریق بنایا گیا ۔جسٹس طارق محمود جہانگیری نے استفسار کیا کہ پرویز الٰہی کو رہا نہیں کیا گیا ؟ وکیل نے کہا کہ پرویز الٰہی کو رہا کرنے کے بعد پولیس لائنز کے پاس سے گرفتار کیا گیا ، عدالت نے ریمارکس دیئے کہ پرویز الٰہی کو رہا کرنے یا دوبارہ کسی اور کیس میں گرفتار کرنے میں فرق ہے ، اس عدالت کا ایسا کوئی حکم نہیں کہ انہیں کسی اور کیس میں بھی گرفتار نہیں کیا جا سکتا ،اگر اس عدالت کے حکم کے باوجود تھری ایم پی او میں رہا نہیں کیا گیا تو توہیں عدالت بنے گی ،وکیل نے کہا کہ لاہور ہائیکورٹ نے کسی بھی کیس میں گرفتار نہ کرنے کا حکم دیا تھا ، عدالت نے ریمارکس دیئے کہ پھر توہین عدالت کی درخواست لاہور ہائیکورٹ میں ہو گی ،جسٹس طار ق محمود جہانگیری نے ریمارکس دیئے کہ اس عدالت کا ایسا کوئی حکم نہیں ،عدالت نے حکم دیا کہ کسی اور کیس میں مطلوب نہیں تو رہا کیا جائے ،اگر کسی اور کیس میں گرفتار کیا گیا ہے تو وہ معاملہ متعلقہ ٹرائل کورٹ نے دیکھنا ہے ،پرویز الٰہی تو گاڑی میں آپ کے ساتھ بیٹھے ہوئے تھے ،جب انہیں رہا کر دیا گیا تو ہمارے آرڈر کے خلاف ورزی کیسے ہوئی ؟وکیل نے کہا کہ پرویز الٰہی کو پولیس لائنز میں رکھا گیا تھا ،گیٹ پر اسلام آباد پولیس ، سی ٹی ڈی اور سادہ لباس والے کھڑے تھے ،جسٹس جہانگیری نے ریمارکس دیئے کہ پرویز الٰہی کا متعلقہ کورٹ نے اب ریمانڈ بھی دے دیاہے ،وکیل نے کہا کہ اس عدالت کے آرڈر کو فرسٹریٹ کرنے کیلئے دوبارہ گرفتار کیا گیا ۔
ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے کہا کہ اس عدالت کے حکم پر پرویز الٰہی کو رہا کیا چکا ہے ،جسٹس طارق محمود جہانگیر ی نے ریمارکس دیئے کہ اب تو ایڈووکیٹ جنرل کی سٹیٹمنٹ بھی آ گئی ہے ،ہم نے تو دوسری سائیڈ کو نوٹس کیے بغیر تھری ایم او آرڈر معطل کر دیا تھا ،ابھی وہ کیس چل رہاہے ، ڈی سی اسلام آباد کومنگل کیلئے نوٹس کر رکھا ہے ،اگر پرویز الٰہی کو رہا نہ کرتے تو عدالت سخت ایکشن لیتی ،عدالت نے چوہدری پرویز الٰہی کی جانب سے دائر کی گئی توہین عدالت کی درخواست خارج کر دی ۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں